اشاعتیں

اگست, 2023 سے پوسٹس دکھائی جا رہی ہیں

غلام منور کی تمام تحریریں | ریختہ

تصویر
غلام منور   ہم سے رابطہ کریں   • ہمارے بارے میں  • دستبرداری • رازداری کی پالیسی تعارف     غز ل 56    اشعا 124       نظم 2     اقوال 35    ای - کتاب 6 غلام منور ____ غزل   56 ____ ♥️ اداس شامیں عذاب راتیں گزر ہی جائیں گی روتے رو تے ♥️ تیری قربت میں پڑھتی ہے مری دھڑکن اسے کہنا ♥️ کیا بتلائیں تجھ کو حقیقت غم نے ایسا زبان کیا ♥️ نصیبوں کی روانی تھی میاں پہلے بہت پہلے ♥️ پھر انا کو دفنایا ہے غبار ہونے کو __________ تمام اشعار 124 ____ گلے    سے   لگا  کر  ہمیں  رو  دیئے   وہ بچھڑ کر کبھی ہم نہ یوں مل سکے پھر __________ یہ زمیں وہ آسماں کچھ بھی نہیں بن ترے سارا جہاں کچھ بھی نہیں __________ وہ شوخی سے کبھی غالب ہو جاتا تھا ہم پہ ہم سے بھولی نہیں جاتی یہ چاہت اس کی __________ اپنوں کے رخ بدلنے سے تھا پریشاں میں پھر یوں ہوا کہ جاناں تم بھی بدل گئے __________ اب کے سوچا ہے بگاڑوں میں یہ صورت کسی دن لوگ چہرے پہ اداسی کا سبب پوچھتے ہیں  __________ تمام اقوال   35 ____ کسی کو بیوفا کہنے سے پہلے، اس کے نظریے سے بھی، اپنے اندر گہرائی تک جھانک کر ضرور دیکھ لیں  ____________ جو شخص آپ کو باد مخالف

کبھی جاں نثار کرتا کبھی تکتا رہتا چاند

غلام منور کبھی  جاں  نثار   کرتا   کبھی  تکتا  رہتا   چاند  کبھی  حد میں  رہتا تو کبھی  حد پار کرتا چاند   لا کر شوخی ہونٹوں پر کبھی بولے ہی جاتاچاند   کبھی لگ کے میرے پہلو  سے سوتا ہی رہتا چاند  مجھے  اب تو  آتی  ہے    یاں  بہت  یاد   آپ کی ملاؤں میں فون جب  بھی  کئی بار   کہتا   چاند مرے آنے  کی خوشی میں  کہاں  کرتا   کام کو شب و روز میرے عشق میں سجتا سنورتا  چاند منورؔ  کے  آگے  آگے   نڈر    ہو   کے  چلتا    چاند جہاں  کڑ کے  بجلی کوئی  بہت زور  ڈرتا   چاند 09/02/2023   ♥️

انتظار وفا صبر دعا شم

غلام منور انتظار وفا صبر دعا شم تیرے عشق میں کیا کیا نہ کریں ہم ______________

انسان کسی کے لیئے جان عزیز

غلام منور انسان کسی کے لیئے جان عزیز تو کسی کے لئے عذاب جان ہوتا ہے ______________

اس چاندی سا دست میں اک خنجر دیکھا

غلام منور اس چاندی سا دست میں اک خنجر دیکھا ہم نے  اپنی  آنکھوں  سے  وہ منظر دیکھا لخت دل   کو   چھین  لیا جب  اپنوں  نے ان آنکھوں سے   ڈھلتا  مہا  ساغر   دیکھا   ہر پل   ذکر ہجراں     زباں   پر    وہ   لاتا پھر ہم  نے  سچ ہوتے  یہی  محشر  دیکھا حاکم  سدھرے  گا  کیا  منورؔ  اب تم  سے ہم نے   رشوت   کھاتے  کئی  افسر  دیکھا 09/02/2023 ♥️

انسان میں ختم ہو چکی حیوانیت، منافقت، جاہلیت، نفرت، اب

غلام منور انسان میں ختم ہو چکی حیوانیت، منافقت، جاہلیت، نفرت، اب صرف بچیں ہیں انسانیت، اخوانیت، روحانیت، محبت ______________

محبوب کی پناہ میں ٹھوکر لگے جسے

غلام منور محبوب کی پناہ میں ٹھوکر لگے جسے آتے کہاں ہیں لوٹ کے دیوانے پھر کبھی ______________

وہ شوخی سے کبھی غالب ہو جاتا تھا ہم پہ

غلام منور وہ شوخی سے کبھی غالب ہو جاتا تھا ہم پہ ہم سے بھولی نہیں جاتی یہ چاہت اس کی __________

کانوں میں غائب سے صدا آئی ہے

غلام منور کانوں    میں    غائب   سے    صدا   آئی  ہے یہ    دنیا       خاموش        تماشائی      ہے رو رو  کے  اب  بجھ  گئی  ہیں  یہ  آنکھیں ناصح       میرا      عشق      زليخائی     ہے عدت    ہوئی      عمر        ہماری        ساری الفت   کی    ہم    نے   یہ    سزا    پائی   ہے کچھ بھی سوچوں پل میں سمجھ جائے ہے میرے  دل   سے   اس   کی    شناسائی   ہے  الجھاتے   ہیں     دل   کو      منورؔ  ہر    جا   پھر   بھی    دل   تیرا     ہی     تمنائی    ہے 04/07/2O23   ♥️

انسان بہت ہی عجیب و غریب فطرت کا مالک ہے

غلام منور انسان   بہت   ہی عجیب و غریب فطرت کا مالک ہے، یہ اپنے عارضی لہجے سے دل میں مستقل درار پیدا کرتا   ہے _________

خلوص میں دست چومتا ہی رہا منورؔ

غلام منور خلوص میں دست چومتا ہی رہا منورؔ کوئی چلا ہی گیا محبت یتیم کر کے _____________

بے دل سے دل لگی کا مزا ہم سے پوچھئے

غلام منور بے دل  سے  دل لگی  کا  مزا  ہم  سے پوچھئے الفت  میں  خودکشی کا مزا  ہم سے  پوچھئے قدموں سے  کچلے ہے  وہ  جگر لخت لخت  کو آنکھوں کی  بےبسی کا  مزا  ہم  سے  پوچھئے ملتا ہے  تیرے  وصل  میں  ہی روح کو سکوں فرقت  میں   بیکلی  کا  مزا ہم   سے  پوچھئے فاقہ کشی    میں   اپنی    غزل   بیچنی   پڑی غربت  میں  مفلسی کا   مزا  ہم  سے  پوچھئے جنت   کی    عاشقی     کا   مزا    آپ    جانئے دوزخ  کی   عاجزی  کا   مزا  ہم  سے  پوچھئے ناصح جو بھی کہے ہے وہ سب  ہم تو جانے ہیں ایسے  میں  خامشی  کا  مزا  ہم  سے  پوچھئے دیتا  نہیں   خلوص   وہ    پھرتے   ہیں  در بدر محشر  کی   بےبسی  کا  مزا  ہم  سے  پوچھئے غافل  جہاں  سے  ہوکے  کبھی پوجا  تھا جسے اس  بت  کی  بندگی  کا  مزا ہم  سے  پوچھئے 24/01/2023 ♥️

یہ زمیں وہ آسماں کچھ بھی نہیں

غلام منور یہ زمیں وہ آسماں کچھ بھی نہیں بن ترے سارا جہاں کچھ بھی نہیں __________

جو لوگ وفادار ہوتے ہیں

غلام منور جو لوگ وفادار ہوتے ہیں وہ بھلے کچھ دیر کے لئے رستہ بھٹک جاتے ہیں، پر اپنا آشیانہ کبھی بھی نہیں بھولتے ___________

خیال تیرا بھلاؤں کیسے

غلام منور خیال   تیرا    بھلاؤں   کیسے چراغ دل  کا  بجھاؤں  کیسے صنم   ہمارا     ہو  روبرو    گر نگاہ    اپنی    اٹھاؤں   کیسے جو  آہ  میری   سنے  نہیں  ہے عذاب میں  ہوں  بتاؤں  کیسے مجھے بھی دینی ہے مات لیکن میں آپ کا  دل دکھاؤں کیسے خلاف ہیں  جو  وفا کے  ان کو غزل میں  اپنی  سناؤں  کیسے زمانہ     ہے      بے ادب    منورؔ سخن کی  محفل  لگاؤں کیسے 27/03/2023 ♥️

کمسنی کی محبت میں غلط فہمی

غلام منور کمسنی کی محبت میں غلط فہمی ایک بڑا مسئلہ ہے ________

کیا کہا پھر سے کہیے تو

غلام منور کیا کہا پھر سے کہیے تو آپ کو مجھ سے الفت ہے __________

ہر انسان جہاں میں حاصل کرنے

غلام منور ہر انسان جہاں میں حاصل کرنے کے لئے نہیں آتے کچھ لوگ اس دنیا کو کچھ دینے کے لئے آتے ہیں _______

کسی کو بیوفا کہنے سے پہلے

غلام منور کسی کو بیوفا کہنے سے پہلے، اس کے نظریے سے بھی اپنے اندر گہرائی تک جھانک کر ضرور دیکھ لیں _______

ازل سے عورت کے لہو میں بغاوت

غلام منور ازل سے عورت کے لہو میں بغاوت مرد سے زیادہ ہے جو علم آتے ہی بے وقوف عورت کے کردار بلاوجہ دکھائی دینے لگتا ہے جب کہ کچھ عورتیں کامل ہونے کے ساتھ ساتھ حکمت بالغہ اور سراپا محبت ہوتی ہیں *** ________

اب کے سوچا ہے بگاڑوں میں یہ صورت کسی دن

غلام منور اب کے سوچا ہے بگاڑوں میں یہ صورت کسی دن لوگ چہرے پہ اداسی کا سبب پوچھتے ہیں *** _______

اپنا لہجہ بدل آ ذرا پیار کر

غلام منور اپنا    لہجہ    بدل   آ    ذرا    پیار  کر دل میں الفت جگا پھر مجھے خوار کر ظلم  کر  زار  کر   بزم  میں   خوار  کر اب جو کرنا  ہے  تجھ  کو  مرے یار کر ہے خبر  تجھ  کو گر  چاہتا  ہوں تجھے پھر  تو  اس  راز  کو جا  تو  اخبار  کر دست میں لے  کے   خنجر  ڈرا  اور پھر زخم تر  ہو  جہاں  واں  پہ  تو  وار  کر چھل  کیے   جا  ہمارے   منورؔ  سے   تو یوں  کسی  کا   بسر  کرنا   دشوار   کر 31/05/2023 ♥️

جو شخص ہمارے سمجھ سے باہر ہوتا

غلام منور جو شخص ہماری سمجھ سے باہر ہوتا ہے، اسے ہم انجانے میں برا سمجھ نے لگتے ہیں *** _______

گمان میں عالم گیر آوے ہے

غلام منور گمان میں عالم گیر آوے ہے زباں پہ جب کلمہ میرؔ آوے ہے *** ________

بس تو ہی تو ایک دم ہے میرے لئے

غلام منور بس تو ہی  تو ایک  دم  ہے  میرے  لئے  کیا  ترے  دل میں  کرم  ہے  میرے لئے دو جہاں کی اب تمنا میں کیوں کروں  کیا  ترا  ہی  ساتھ  کم  ہے  میرے  لئے یاد   آتی    ہیں    پرانی    باتیں   مگر آپ  ہیں  تو اب کیا  غم  ہے میرے  لئے پھر دکھائے ہے  ترے  دو  پل  کی  وفا فون بھی اب  اک  الم   ہے  میرے  لئے اس جنم میں آپ  میرے ہیں ہی  نہیں یہ ستم  بھی  کیا  ستم  ہے  میرے لئے اے  منورؔ  تم   کسی   کو   کہنا   نہیں خصم  جاں  میرا صنم  ہے  میرے  لئے 02/05/2023 ❤️

نصیبوں کی روانی تھی میاں پہلے بہت پہلے

غلام منور نصیبوں  کی  روانی  تھی   میاں  پہلے   بہت  پہلے  کبھی  اپنی   جوانی  تھی   میاں  پہلے   بہت  پہلے کسی کی  یاد آتی  تھی وہ  بھی اک دن  بھلا بیٹھا محبت  کی   نشانی   تھی   میاں   پہلے  بہت  پہلے ستم گر نے یہ  سوچا  تھا بھلا مجھ کو نہیں سکتا یہ  ان   کی  بدگمانی   تھی  میاں  پہلے  بہت  پہلے صنم جس کو سمجھ تے ہو وہ بت میں نے تراشا ہے کبھی  میری  ہی  جانی تھی میاں  پہلے  بہت  پہلے چلا جاتا کبھی جو میں صنم کے گھر تو روز و شب مری  ہی   میزبانی   تھی   میاں   پہلے   بہت   پہلے بچھڑ کر ہم ملیں گے  پھر  لیا  تھا یہ  وچن اس  نے یہی ہم  نے  بھی  ٹھانی تھی میاں پہلے  بہت  پہلے 25/05/2023 ♥️

اک بشر پر کہاں جی پاتے ہیں

غلام منور اک بشر پر کہاں جی پاتے ہیں لوگوں کو لوگ مل ہی جاتے ہیں *** ___________

جب بھی ہم آ کھڑے ہوئے محراب میں

غلام منور جب   بھی   ہم  آ  کھڑے   ہوئے   محراب  میں اک   جنوں     آ    گیا     سارے     احباب    میں شب کو چھت پر جوں جوں کھولے وہ زلف کو تاب   بڑھتا    ہی    جائے     ہے     مہتاب    میں جن  کے   ہونٹوں   پہ   شوخی ہوا  کرتی  تھی  اب   تو   وہ    گفتگو   کرتے    ہیں    تاب   میں وہ  بھی   تصویر   دھندلی   ہوئی   جاتی   ہے جو    بنائے    تھے    تصویر   ہم    خواب   میں  میں  کھڑا   تکتا   ہی   رہتا   ہوں    ان  کو  اب نقش   ان     كا     نظر     آئے     ہے    آب   میں دل  لے  کر      چھوڑ     آئے     منورؔ     کو    تم دل   بھی  تھا   مشتمل  ان  کے  ہی  باب  میں 13/05/2023 ♥️

پکڑ کر پاؤں کرتا ہی رہا منت

غلام منور پکڑ کر پاؤں کرتا ہی رہا منت کوئی خود کو چھڑا کر لے گیا مجھ سے *** __________

غلام منور کی ترتیب کردہ کتابیں

تصویر
  غلام منور کی ترتیب کردہ کتابیں شمارہ نمبر 56 2023 شمارہ نمبر 60 2023   شمارہ نمبر 61 2023 شمارہ نمبر 63 2023  شمارہ نمبر 64 2023 غلام منور کی کتاب  دیوان منور                    2023                                                 

غلام منور کی نظمیں

غلام منور ⁦❤️⁩ نظم گڑیا ⁦❤️⁩ ادنٰی عالم گیر بنے

غلام منور کے اقوال

غلام منور کسی کو بیوفا کہنے سے پہلے، اس کے نظریے سے بھی، اپنے اندر گہرائی تک جھانک کر ضرور دیکھ لیں  ____________ جو شخص آپ کو باد مخالف سمجھتا ہو اس پہ آپ کی محبت کا کوئی اثر نہیں ہوگ ا ____________ میں لوگوں کو نصیحت کرنے کے بجائے، اپنے عقل پر آپ عمل کرنے پہ زیادہ زور دیتا ہوں ____________ کمسنی کی محبت میں غلط فہمی ایک بڑا مسئلہ ہے ____________ عشق و محبت یک طرفہ اور لافانی ہوتی ہے اس کا سب سے بڑی دلیل خدا کی ذات ہے یہ ستتر ماؤں سے زیادہ ہمیں پیار کرتا ہے، چاہے ہم اس کی عبادت کریں نہ کریں، یہ کبھی ہم سے محبت کرنا نہیں چھوڑتا، نہ ہی تنہا چھوڑتا ہے بلکہ ہمارے گناہوں کی پردہ پوشی کرتا ہے بیشک وہ رحیم و کریم و عشق صادق ہے ____________ موجودہ سرکار نے معاشرے کی ظالمانہ پابندی کو توڑ نے کے لئے عوام سے "بیٹی بچاؤ بیٹی پڑھاؤ" کا نعرہ لگوا کر، بیٹیوں کو اعلیٰ سے اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے لئے حوصلہ افزائی کر خود مختار تو کیا، لیکن افسوس وہ حکمت اور حیا سے محروم ہوتی جا رہی ہیں ____________ ازل سے عورت کے لہو میں بغاوت مرد سے زیادہ ہے، جو علم آتے ہی بیوقوف عورت کے کردار میں بلاوجہ دک

غلام منور کا تعارف

غلام منور تخلص:          منور اصلی نام:    غلام منور  پیدائش:      2000 اگست19،   نواده   ہندوستان استاد:          ثاقب سیال، سرفراز ضیاء  جنم دن سے لے کر کے میرے مرنے تک  وہی عشق و جنوں سر پر رہا صاحب غزل دیکھئے نام میرا ہے غلام منور، میری پیدائش 2000 اگست 19 کو  محلہ اسلام نگر بہار کا ایک ضلع نواده (ہندوستان) میں ہوئی، جو کہ میرا نانی گھر ہے، میں بچپن میں بہت پیارا سا دکھتا تھا سو لوگ مجھے (مونو) کہہ کر پکارا کرتے تھے، میرے والد محترم کا نام محمد طاہر ہے جو کلکتہ میں چمڑے کی چپل کا کاروبار کیا کرتے تھے، وہ 2006 میں اس جہان فانی سے کوچ کر گئے اور والدہ کا نام نوشابہ خاتون ہے، میرے دادا  محترم کا نام محمد بشیر ہے جو کہ ایک گاؤں دھنچوہی ضلع نالندہ (بہار) کے رہنے والے تھے جب اپنے گاؤں میں جاتا ہوں تو اپنے دادا محترم کے بارے میں گاؤں والوں سے سننے کو ملتا ہے کہ میرے دادا محترم نہایت شریف اور  انصاف پرست انسان تھے، وہ سب کے حق میں بالکل  سہی  فیصلہ کیا کرتے تھے۔ جب میں پیدا ہوا تو میرے دونوں پاؤں ٹحنی سے کچھ مڑے ہوئے تھے، کہا جاتا ہے کہ جب میں پیٹ میں تھا تو اس وقت ایک دفعہ چاند گرہن لگا

غلام منور کے اشعار

غلام منور صوفی کے نسل آج یوں عیاش ہو گئے  حجرہ شریف شیخ کا میخانہ ہو گیا  ___________ باتیں بڑی بڑی میاں کرتے تھے آن میں چھوٹی سی بات ہوئی کہ بس مرنے کو چلے  ___________ نالہ کیا بہت کہ نہ چھوڑو یوں تم مجھے آخر میں ظلم و جبر سے دامن چھڑا گیا  ___________ آتے ہو پل دو پل کے لیے مہماں بن کے تم ہر بار مجھ سے مل کے یوں بچھڑا نہ کیجئے ___________ حرص بن اردو کی خدمت کرتی ہیں ہاں دعاؔ کی  آن ہے بابِ دعا ___________ آتش بجاں سے تُو نہ رو کو پھر یوں موڈ اب  پھٹ کر کلیجہ خون سے منہ بھرنے کو چلے ___________ ہم جان عشق میں دے کے بدنام ہو گئے داڑھی بڑھا کے بد بلا مولانا ہو گیا ___________ کی ہے جفا یہ آپ نے اب کون وصف سے  مدت پہ مجھ کو ہوش جو آیا چلا گیا ___________ ہم نے سنا کہ قریہ میں کافر  تھا جب تلک  موسم یہاں قفس میں بھی شاداب سا رہا ___________ آفاق میں جائیں  تو جائیں ہم  کہاں  کچھ اپنی ہستی ہی نہیں بن آپ کے ___________ بچھڑ کے تجھ سے اب اجڑ گیا ہوں میں سنو ہو غم سے رخ عجیب ہو گئے ___________ ایفا جو کر سکو تو کوئی عہد کیجئے  آخر میں چھوڑنا ہو تو وعدہ نہ کیجئے ___________ تری قر

اس بلاگ سے مقبول پوسٹس

غلام منور کی تمام تحریریں | ریختہ

اداس شامیں عذاب راتیں گزر ہی جائیں گی روتے روتے

غلام منور کی غزلیں