اشاعتیں

ستمبر, 2023 سے پوسٹس دکھائی جا رہی ہیں

غلام منور کی تمام تحریریں | ریختہ

تصویر
غلام منور   ہم سے رابطہ کریں   • ہمارے بارے میں  • دستبرداری • رازداری کی پالیسی تعارف     غز ل 56    اشعا 124       نظم 2     اقوال 35    ای - کتاب 6 غلام منور ____ غزل   56 ____ ♥️ اداس شامیں عذاب راتیں گزر ہی جائیں گی روتے رو تے ♥️ تیری قربت میں پڑھتی ہے مری دھڑکن اسے کہنا ♥️ کیا بتلائیں تجھ کو حقیقت غم نے ایسا زبان کیا ♥️ نصیبوں کی روانی تھی میاں پہلے بہت پہلے ♥️ پھر انا کو دفنایا ہے غبار ہونے کو __________ تمام اشعار 124 ____ گلے    سے   لگا  کر  ہمیں  رو  دیئے   وہ بچھڑ کر کبھی ہم نہ یوں مل سکے پھر __________ یہ زمیں وہ آسماں کچھ بھی نہیں بن ترے سارا جہاں کچھ بھی نہیں __________ وہ شوخی سے کبھی غالب ہو جاتا تھا ہم پہ ہم سے بھولی نہیں جاتی یہ چاہت اس کی __________ اپنوں کے رخ بدلنے سے تھا پریشاں میں پھر یوں ہوا کہ جاناں تم بھی بدل گئے __________ اب کے سوچا ہے بگاڑوں میں یہ صورت کسی دن لوگ چہرے پہ اداسی کا سبب پوچھتے ہیں  __________ تمام اقوال   35 ____ کسی کو بیوفا کہنے سے پہلے، اس کے نظریے سے بھی، اپنے اندر گہرائی تک جھانک کر ضرور دیکھ لیں  ____________ جو شخص آپ کو باد مخالف

ایسا گرا کہ جھولا ہی صاحب کا پھٹ گیا

غلام منور  ایسا  گرا  کہ جھولا ہی صاحب  کا  پھٹ  گیا   وہ   نامراد      پھر  کبھی    ہٹلر    نہیں    ہوا ہر    اضطراب   میں      گیا    ملنے    در قفس  پر     آہ   ان  کا     قرب    میسر    نہیں    ہوا پیری  میں کچھ  بنا  نہ ترا  عکس  ذہن   میں سوچا    بہت  مگر    یہ     تصور    نہیں   ہوا  صد سال میں  رہا تھا  جو بھی  اضطراب میں گزرا    نہ    ماہ      اک  جو   دسمبر  نہیں  ہوا جاؤ نہ   جا   کے   ڈھونڈ  لو   دنیا  جہان  میں   پیدا  ہی    چاک   دل  کا    رفوگر     نہیں ہوا یہ میرا ہی جنوں ہے جو سمجھوں میں آپ کو مجھ  سا   تو  آج  تک  یاں  سخنور   نہیں ہوا یوسف  ہو بت  ہو یا  کسی  جنت  کی حور ہو  آفاق   میں  حضور ﷺ   سا  جوہر  نہیں   ہوا 18/08/2023 ♥️

آپ کی گری پلکیں نم ہیں کیا

غلام منور آپ  کی    گری  پلکیں   نم  ہیں  کیا  آپ  کو  بھی جاں  کچھ الم ہیں کیا  بیٹھی ہیں جو شوخی سے گود میں  آپ    کے    منورؔ    صنم    ہیں   کیا نیند    میں    لی  ہے   بوسے  آپ  نے دیکھو   تو  ذرا  اب بھی  ہم ہیں کیا ہاتھ     کیوں     ملایا    رقیب   سے  آپ    کے    پیا    محترم    ہیں   کیا میرے    خصم    سے    آشنائی   کی آپ   کے   ستم  سارے  کم  ہیں  کیا دور     بیٹھے    جو   مسکرائے   ہیں ہند    کے    وہ     اہل قلم   ہیں   کیا 27/11/2022 ♥️

جو تیر تم نے مارا تھا دل میں ہی ره گیا

غلام منور         جو تیر  تم نے  مارا  تھا  دل  میں   ہی ره گیا         پھر عشق   میں جہان  کی کلفت بھی سہ گیا    اپنوں  کی  بے  تمیزی  یہ  در  در کی ٹھوکریں   ہجرت   کیا جو تونے  جی   کیا  کیا نہ سہ گیا مجرم  سا  یوں قفس  میں   گزاری  ہے زندگی         ارمان  دل میں جو  تھا وہ آنکھوں سے بہ گیا         رہتا تھا قرب میں کبھی پھر اٹھ کے ایک شب ہوکے   خفا  بہت   مرے   پہلو    سے  مہ   گیا اب   کے    وصال   میں   بڑا   اک   حادثہ  ہوا  اب  کام  میں   نہ  آؤں  گا  آخر  وہ   کہہ  گیا  14/08/2023 ♥️

ہے عشق میں جو کام مرے یار کرتا چل

غلام منور ہے عشق  میں جو کام  مرے  یار  کرتا چل پھر عشق سے تو سب کو خبر دار کرتا چل جاناں کی بکھری  ہوئی  زلفیں سمیٹ  کر بس  آپ  کو   تباہ   اے  دل  دار  کرتا  چل جا تجھ کو در پہ پھر اسی کےخوار ہونا ہے عزت  کا  كار  ہے  یہ    کئی   بار  کرتا  چل ہے تجھ  کو  فکر  اب کہاں  اپنے  وقار کا ماں باپ کو بھی بزم میں تو خوار کرتا چل دیتا  ہے  جو   پریت  کا  پیغام   ان  پہ  اب     ساماں جو بھی ملے اسی سے وار کرتا  چل ہیں اور  بھی  فریب  ترے  پر  یہ  سنتا  جا معصوم سی كلی کو بھی  تو زار  کرتا  چل   بہلانے  کو  جی  کچھ  تو  منورؔ   رہا  نہ اب       ہے زخمی اک  پرندہ  اسے   پیار   کرتا  چل 13/08/2023 ♥️

اک قول آج سر کے اپر سے گزر گیا

غلام منور اک قول   آج   سر  کے  اپر  سے  گزر   گیا دل  کہتا   ہے  صنم کے   خبر دار  گھر گیا تعویذ   سجدہ  پوجا   تلاوت    دعا    دوا عاشق ہو کے  جہان میں  کیا کیا نہ کر گیا بس ملنے کو تڑپتا  رہا تجھ سے ہی یہ دل جب جب  میں کوئی  کام سے تیرا نگر گیا جب  بات  کچھ  بنی نہیں فریاد کرنے سے کرنے    کو  منتیں  کئی   درگاہ و در    گیا دل کہتا راہ عشق  میں  مجھ   کو یہ بارہا مجھ  سے  برا نہ   ہوگا کوئی گر تو ڈر گیا ایسے   جدا  ہوا  کہ  لگا   جاں  گئی   مری  وہ  میرے  پاس    آکے   یوں  بار  دگر  گیا کہتا ہے پیار کو مرے سب سے جو تو ہوس  الزام  سے  یوں تیرے  مرے تن سے سر گیا ڈھونڈو ہو اب کیا ان کو جہان خراب میں دے کر دل و جاں  تجھ کو منورؔ تو مر گیا 10/08/2023 ♥️

ہم نے جو سوچا تھا دل و خواب و خیال میں

غلام منور ہم نے جو سوچا تھا دل و خواب و خیال میں وہ تو  نہ ہو  سکا  کسی   صورت  وصال میں  صد گل ہیں باغ دل میں وہ غنچہ بھی ہے مگر حق میں نہ ہے  کوئی نہ ہی شامل  حلال میں جنت کی حور  اتنا بھی شہ روپ ہے کہاں ہے  اور    بات   آپ   کے   حسن و جمال   میں ظالم کے ظلم سے بھی نہ  بدلا   تھا ان  کا دل ایمان و صبر   کتنا  تھا  حضرت     بلال  میں ظالم  کا  تھرتھرا اٹھے   گا   تن   اسی  اجل  شیر خدا    جو   آئے کسی  دن  جلال   میں اس  کے   بنا   برا  ہے    منورؔ   کا  حال  اب رب  جانے  کیا  کمال  ہے   اس   باکمال  میں 08/08/2023 ♥️

میں گر روٹھا جہاں سے تو کہاں سے تم مناؤ گے

غلام منور میں گر  روٹھا جہاں سے تو  کہاں سے  تم  مناؤ گے نہ  گر  جگ  میں رہا  میں تو  کسے پھر تم ستاؤ گے میں  تم  سے  روٹھ کر جاناں  چلا آیا ہوں گھر لیکن نہیں   لگتا   کہ  مجھ  کو  تم  منانے اب  یاں  آؤ گے ہے  سب کو یاں خبر کی اب میں واپس آ نہیں سکتا رہو یادوں میں  میری تم کہاں سے  مجھ کو  لاؤ گے وہ  جن  کی یاد میں  تم نے  گزاری ہیں کئی صدیاں اسے  کیسے  میاں   یک لخت  دل  سے تم  بھلاؤ گے گنہ گاروں میں شامل  ہو   منورؔ   تم  جہاں  میں  اب جہاں سے اٹھ کے کس منہ سے خدا کے پاس جاؤ گے 05/08/2023 ♥️

کیا بتلائیں تجھ کو حقیقت غم نے ایسا زبان کیا

غلام منور کیا    بتلائیں    تجھ   کو   حقیقت    غم  نے   ایسا   زبان  کیا اپنا   کوئی    بوجھ    نہ  پایا    جو   بھی   ہم   نے   بیان   کیا مجھ  میں  ناصح عشق  جنوں  مجنوں  فرہاد  سے  کم  نہ  ہوا تھی    جو   اک  مٹی  کی   امورت   اس  کو   دنیا   جہان  کیا کوئی   اک   بھی    دکھ   کو   ہمارے   آکر   تو  نہ   خرید  سکا پھر  کیوں  ہم نے  سوچ   سمجھ   کر  آخر   غم  کا   دکان  کیا جوں  جوں   ٹوٹا  دل  یہ  ہمارا   تیوں  تیوں   ذہن  خراب   ہوا لے   کر   خنجر    ہاتھ   میں   اپنے   دل   میں   اور   نشان  کیا جو بھی ہیں تعریفیں جہاں میں سب کے سب ترے واسطے ہیں  جگ   کے   سارے  لفظ   کو   یعنی   سب   نے   تیرا  قیان   کیا   کوئی   کتنا   پھیرے   یہاں   اب   اپنا   ہاتھ    یتیم   کے    سر گھر  کی  عسرت دیکھ  کے  نو عمری  میں خود  کو  جوان کیا  شب  کو   دعوت  میں  بلا  کر   کتنا  انہوں   نے   خلوص   دیا  پرکھا   جانا  کچھ   بھی  نہیں  بس   ان  سے   جلد  قران  کیا آئے  تھے کچھ  شیخ  کے  چمچے  زر  سے  ہم  کو خرید  نے کو مال و دولت   چھوڑ   دیا  ہم   اتنا   تجھ   ہی    پہ  شان   کیا محفل میں ٹک بو

خطا کر مسکرانے نہیں آتے

غلام منور خطا کر مسکرانے نہیں آتے وہ اب مجھ کو ستانے نہیں آتے وہ آتے ہیں فقط خامشی لیکر جھگڑ کر دل دکھانے نہیں آتے شرارت سے بچا کرتے تھے جن کے وہ ضد کر حق جتانے نہیں آتے یوں ہی تم سے خفا تو نہیں ہوں میں کیوں تم مجھ کو منانے نہیں آتے ہے کچھ بوسے کا بھی قرض ان کے سر کسی صورت چکانے نہیں آتے کسی باعث بھی ان کو بلائیں تو نہیں کوئی بہانے نہیں آتے غزل گوئی ہی کرتا ہوں خلوت میں مجھے کوئی فسانے نہیں آتے جہاں تم نے منورؔ کو چھوڑا ہے وہاں ان کے گھرانے نہیں آتے 20/11/2022 ♥️

یہ دل اپنا شعلہ بن کر جلتا ہی جائے ہے

غلام منور یہ دل  اپنا شعلہ بن کر جلتا ہی جائے ہے صحرا میں اب کوئی خود کو کھوتا ہی جائے ہے جوں جوں دل میں تم سے میں نفرت کرنےکو سوچوں  تیوں تیوں یہ دل تیرا عاشق ہوتا ہی جائے ہے گلشن میں ہم دونوں جائیں تتلی سے پھر کھیلیں  کوئی جینے کی خواہش میں مرتا ہی جائے ہے  ہم پتھر بن کر رہتے ہیں تیرے آ گے لیکن  دل ہردم تیری الفت کو روتا ہی جائے ہے کل ہی تیری چوکھٹ سے دے مارا ہے اپنا سر تو بھی جاناں میرا دشمن بنتا ہی جائے ہے تم گلشن سے تنہا گھر آئے سو کوئی در در ہائے مجنوں کی صورت میں پھرتا ہی جائے ہے زخم دل اہل دنیا سے ہر دم پو شیدہ کر کوئی خود ہی اپنا مرحم کرتا ہی جائے ہے رکھ کر خنجر سینے پر وہ دہلاتا ہے مجھ کو کیسے وہ ظالم آگے کو بڑھتا ہی جائے ہے محفل میں آنسو کو پوشیدہ کرتا ہوں لیکن آنکھوں میں وہ غم کا گوہر دیتا ہی جائے ہے تنہا گھر کے کونے میں جو رو

داغ الفت آفت ہے سو ہے

غلام منور داغ  الفت    آفت     ہے    سو   ہے روح  تن   میں  کلفت  ہے   سو  ہے ہم  اک   ہرجائی  کے   عاشق   ہیں تم  کو  ہم سے  الفت  ہے   سو   ہے وہ   چاہے   ہیں   ٹوٹے   یہ   بندھن  پھر بھی ان سے  نسبت ہے سو  ہے وہ  ہیں   کتنا  نازک  تن  پھر  بھی ہم کو ان سے  وحشت  ہے  سو  ہے خونِ دل    کر    وہ     اترائے     ہے اب  میری   بد حالت   ہے   سو   ہے سب کہتے ہیں  تو  بھی بچھڑے گا جو  بھی میری  قسمت  ہے سو  ہے فرقت میں  دل صحرا  ہو کیوں کر دل  میں  تیری   چاہت  ہے  سو  ہے ہر  پل   ہم   کو   کھائے   جاتی   ہے وہ میری  ہی  خلوت  ہے   سو    ہے شب کو اٹھ اٹھ کر چیخے  ہیں  ہم تیری  ہی  اک   حاجت   ہے  سو  ہے بیتابی   میں     ساقی    سا    ہوئے جو   تیری  اک   عادت  ہے  سو   ہے ہم   الفت   میں  ہیں بت  کے   عابد وہ  پتھر اک  مورت ہے سو  ہے گل بھی  زخمی    ہو  جاتا  ہے  یاں وہ صادق  کی  صورت   ہے سو  ہے عاشق  تو   سجدے  میں  روئے   ہے ہم    پر   داغ تہمت    ہے  سو    ہے 14/08/2022

ترے کچھ خواب ٹک بویا رہوں گا میں

غلام منور ترے کچھ  خواب ٹک بویا  رہوں  گا  میں سحر  سے  قبل  ہی  رویا   رہوں  گا  میں میں  گھر سے  خوار  ہو کر  گر چلا جاؤں کہاں  تک  اپنا  غم  ڈھویا   رہوں  گا  میں  حسینی   ہوں   ڈرا   كس   کو  رہا  ہے  تو لہو  سے،  آ یہ   رخ  دھویا   رہوں  گا  میں مٹانے    سے    مٹا    تو    کیا   مرا    پیکر تمہارے   پاس   ہی  گویا   رہوں  گا   میں  ابھی   زندہ   ہے  تیرے   در   کا   فریادی  کبھی   زیر زمیں    سویا  رہوں   گا   میں منورؔ    سے      چرا      لایا    تری    یادیں تری  یادوں میں ہی کھویا  رہوں گا   میں 01/08/2023 ♥️

جب مرے پاس زر بھی نہیں تھا

غلام منور جب مرے پاس زر   بھی  نہیں تھا تب کسی کا میں ور بھی نہیں تھا  جس   بشر  کو  اجاڑا  ہے   تم   نے  اس کا تو کوئی گھر بھی نہیں تھا عشق میں بت  پرستی کی  میں نے مرنے کا مجھ کو ڈر بھی  نہیں تھا ٹک  ہی  کانٹوں  پہ چل کے گیا  ڈر ہم سا  اس کا جگر  بھی نہیں  تھا قید تھا  دل   میں  تب   ایک  طائر جب  پرندے  کا پر  بھی نہیں   تھا کیا کہوں تم سے میں ان پہ  میرے  گریہ  کا   تو    اثر  بھی  نہیں تھا آج   اپنے   ہی   گھر      سے   منورؔ نکلا  تو   در بدر  بھی    نہیں   تھا 12/04/2023 ♥️

عاشق ہوں باوفا ہوں مجھے مار دیجئے

غلام منور عاشق ہوں  باوفا  ہوں  مجھے مار  دیجئے  میں عشق  کر رہا  ہوں مجھے مار   دیجئے  اک بے وفا سے  میں کئی  امید   کرتا  ہوں  دیوانہ    ہو   گیا  ہوں  مجھے  مار  دیجئے  اپنے کیے ستم کو   میں  تسلیم   کرتا  ہوں  صادق سا  ہو گیا  ہوں مجھے    مار دیجئے  جس نے مجھے سنوارا  اسی  نے  اجاڑ  ہے  کتنا  بکھر   گیا ہوں   مجھے    مار  دیجئے  معصوم سی پری جو نقابوں  میں رہتی ہے  اس بت کو پوجتا ہوں  مجھے   مار دیجئے  زنجیر  عشق   نے  کیا   زخمی   حیات   کو  لاچار  ہو   گیا   ہوں   مجھے   مار  دیجئے ہر غم زدہ کے غم کو میں اپنا سمجھتا ہوں  غم خوار ہو گیا   ہوں   مجھے  مار  دیجئے  صوفی   فقیر  مولوی  سنت سادھو  پارسا  میں سب کو جانتا  ہوں مجھے مار  دیجئے  افسوس  اب جہاں سے وفا   کوچ کر  گئی  اب مرنا   چاہتا   ہوں    مجھے  مار  دیجئے 06/05/2021 ♥️

کل دو کم کیا

غلام منور کل  دو   کم  کیا مجھ کو  سم کیا پوجا   سب   کو  بت  رب  رم  کیا  مر    کے   تم   پر مجھ میں دم کیا جن   کے   ہو   تم ان   کو  غم   کیا کلفت  میں   ہوں تم  بن   شم  کیا   آؤ    خود     میں  میں  تم  ہم   کیا 12/07/2023 ♥️

وہ آخر اپنے رخ میں ہی آئے گا

غلام منور وہ  آخر   اپنے  رخ میں  ہی  آئے گا کوئی  کردار   کب   تک   نبھائے  گا سحر سے جملے  ہی کس  رہا  ہے  وہ نجانے     اور      کتنا      سنائے    گا خفا اب خود ہی سے ہو گیا ہوں میں مجھے  کوئی   کیا   آکر    منائے   گا وہ پھر  گلشن میں آنے  کو  کہتا  ہے بلا  کر  مجھ   کو  ہر پل  ستائے  گا محبت تو  وہ  کرتا  نہیں  مجھ   کو فقط  آکر   یہاں   حق    جتائے    گا برا اب  لگ  رہا   ہوں  بیاں   سے  گر منورؔ  سے   کہو  چپ    ہو  جائے  گا 05/03/2023 ♥️

جن کو چاک دل کا رفوگر کہتے ہیں

غلام منور جن  کو   چاک دل  کا    رفوگر  کہتے     ہیں آؤ       یاروں        ذکر   منورؔ    کرتے     ہیں جو   شہزادے  ناز  سے   گھر میں   رہتے ہیں آکر  یاں   پردیس میں سب کچھ  سہتے ہیں حب میں اس کی منشا  ہے سمجھا دو ان کو دشت  الفت   میں   یاں  جو  ہر پل جلتے ہیں دل  ہو    تو    آ بیٹھتے  ہیں پہلو  میں   بھی پھر تو میرے  سائے  سے   بھی  وہ بچتے ہیں ہوتا    ہے      افسوس  نئے      مجنوؤں     پر جو    اب    آکر  تجھ   پہ  نہایت  مرتے   ہیں ہم تو ایسے   سادے  ہیں   تیری   الفت   میں جیسے   یاں    معصوم   سے  بچے  ہوتے  ہیں کیا  بتلائیں دل  تجھے  اس  کی  فرقت  میں اب   تو  ہم  اس دنیا  سے   ہردم  اٹھتے  ہیں 08/04/2023 ♥️

آپ کے دل کا قرار ہیں ہم تو

غلام منور آپ  کے   دل   کا   قرار  ہیں  ہم  تو  آپ ہی  کے  جاں  نثار   ہیں   ہم  تو   ان  کی  نگہ  کہاں ٹکتی   ہے  ہم  پر    نظروں میں ان  کی غبار ہیں   ہم تو    ہم سے   رقیب  کا   دست  جو  ٹوٹا کل سے ہی گھر سے  فرار  ہیں ہم تو ہم کو سمجھ نے میں سر نہ کھپا اب تیرے   گمان   سے   پار   ہیں  ہم  تو شعر و سخن   میں   نشا   ہے  ہمارے ہلکا  سا  مے  کا   خمار   ہیں   ہم  تو غیر      سے     کر    نہ    نباہ    منورؔ اپنے   عزیز   کے   پیار   ہیں   ہم  تو 28/02/2023 ♥️

الفت اس بت سے ذرا نہ ملی

غلام منور الفت  اس   بت  سے  ذرا  نہ  ملی تھی   درد دل   کی   دوا   نہ  ملی  محشر تک  ساتھ  نبھائیں  گے  وہ  فطرت میں جن  کی  وفا نہ   ملی  با عزت   وہ    تو    بری    ہو   گیا قاتل   کو   میرے   سزا   نہ   ملی  سجدے شدت سے وہ بھی کرے ہیں  آنکھوں  میں  جن  کی  حیا  نہ ملی  سانسوں میں جن کو سمایا میں نے  ان  ہی  کے  دل  میں  جگہ  نہ  ملی  قاصد  ان   کو   مرا   خط   جو  دیا  پھر  مجھ   سے   باد صبا   نہ   ملی 28/02/2023 ♥️

جو شخص آپ کو باد مخالف سمجھتا ہو

غلام منور جو شخص آپ کو باد مخالف سمجھتا ہو اس پہ آپ کی محبت کا کوئی اثر نہیں ہوگا ___________

رفوگر آ جگر دھاگے سے سل میرا

غلام منور رفوگر آ جگر دھاگے سے سل میرا کسے فرصت جو دیکھے چاک دل میرا ____________

علم عروض

تصویر
غلام منور علم عروض کی تحریریں  بہت سے نئے دوست یہ پوچھتے ہیں کہ ہمیں آسان لفظ میں کوئی علم عروض کی کتاب نہیں ملتی، تاکہ ہم بھی اردو سخن سیکھ سکیں، سو ایسے دوستوں کے لیے بندے نا چیز نے آپ کے لیے، علم عروض کی مکمل تحریر، ایپ، ویب سائٹ اور اسٹڈی میٹریل لائے ہیں، امید ہے آپ لوگوں کو بہت پسند آۓ گی۔  علم عروض کی تعارف * عروض وہ علم ہے جو کسی بھی شعر کے وزن کے معیار کو سمجھنے میں کہ آیا کہ شعر وزن کے اعتبار سے موزوں ہے کہ نہیں معاون و مدد گار ہو. عروض ایک وسیع علم ہے, جس میں اس کے اصول, ارکان, مزاحافات, بحریں شعروں کا وزن اور تقطیع کا مطالعہ شامل ہے. شعر کی اصلاح کی حد تک یہ علم ہے. اور بطور شاعر یہ نہ صرف علم ہے بلکہ ایک فن بھی ہے.  الفاظ کی اقسام     سب سے پہلی قسم ہے وتد مجموع دوسری قسم وتد مفروق اور تیسری قسم ہے سبب 1 وتد مجموع ایسے تین حرفی لفظ کو کہتے ہیں جس کے پہلے دو حرف متحرک مطلب حرکت میں ہوں اور تیسرا ساکن مطلب سائلنٹ ہو مثال کے طور پر خفا وفا جفا بدن دیا نوا صدا زمن کبھی سبھی وغیرہ وتد کی دو اقسام ہیں وتد مجموع اور وتد مفروق   فاصلہ کی دو اقسام ہیں فاصلہ صغری اور فاصلہ کبری

اس بلاگ سے مقبول پوسٹس

غلام منور کی تمام تحریریں | ریختہ

اداس شامیں عذاب راتیں گزر ہی جائیں گی روتے روتے

غلام منور کی غزلیں